Yellow Pages of Pakistan

Non Stop Infotainment By Cyber City Online!

Blog Home | About us | Yellow Pages of Pakistan | CCOL Host | CCOL Net | hussn e-Mag | Realestate Marketing | MBBS in China | Feedback us

Media & News

Find here post regarding Media & News

enter image description here

ٹیکنالوجی کی دنیا میں نئی دھماکہ خیز تبدیلی کا فیصلہ ،ایپل آئی فون میں ایسی ایپ انسٹال کی جائیگی جس سے موبائل ڈیٹا تک رسائی ممکن ہوگی۔تفصیلات کے مطابق سب سے زیادہ محفوظ سمجھے جانے والے ایپل آئی فون میں بھی جاسوسی کی ایپلی کیشنز انسٹال کیے جانے کے امکانات سامنے آئے ہیں۔آئی فونز کو سیکیورٹی کے حوالے سے سب سے زیادہ محفوظ سمجھاجاتا ہے مگر حال ہی میں ایک صارف نے یہ دعویٰ کیا ہے کہ آئی فون میں میسج کے ذریعے جاسوسی کی ایپلی کیشن انسٹال کی جاسکتی ہے۔

اس سے نہ صرف موبائل ڈیٹا تک رسائی بلکہ موبائل ایپس جیسے فیس بک اور واٹس ایپ سے معلومات کے حصول سے لے کر باتیں سننے کے لیے موبائل کا مائیکروفون اور موبائل کا کیمرہ بھی استعمال کیا جاسکتا ہے۔اس کا صارف کو پتا بھی نہیں چلتا کہ اس کی جاسوسی ہورہی ہے۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق ایپل کمپنی نے سیکیورٹی میں یہ خرابی دور کردی جس میں اسے 10 روز لگے۔

enter image description here

اکثر لوگ جب اپنی کار میں پٹرول ڈلوانے کےلیے پیٹرول پمپ پر جاتے ہیں توعموما” مقدار کی بجائے قیمتاً پیٹرول کا آرڈر دیتے ہیں۔ مثلاً 500، 1000، 1500، 2000 وغیرہ وغیرہ. آپ کا آرڈر لے کر filler-boy آپ کو اپنی شفّافیت دِکھانے کےلیے گاڑی پر ہلکی سی تھپکی لگا کر یا میٹر کی طرف اشارہ کرکے پیٹرول ڈالنا شروع کرتا ہے اور آپ مطمئن ہو جاتے ہیں کہ آپ کو پورا پیٹرول ملے گا.جبکہ ایسا ہرگز نہیں ہے۔ دراصل پیٹرول پمپ مالکان نے ماپ تول میں کمی کا ایک انوکھا طریقہ ایجاد کیا ہوا ہے۔ چونکہ لوگ اکثر قیمتاً آرڈر دیتے ہیں اور اکثر پیمانہ چیک کرنے والے متعلقہ محکمے کے اہلکاران بھی چیکنگ کے دوران ایک لیٹر کا پیمانہ بھر کے دیکھتے ہیں کہ مقدار پوری ہے یا نہیں لہذا پمپ مالکان نے اپنے میٹر 500، 1000، 1500، 2000 وغیرہ پر سیٹ کیے ہوئے ہیں۔ مثال کے طور پر اگر 500 روپے میں 7 یا ساڑھے 7 لیٹر پٹرول آتا ہے تو یہ لوگ اُسے 5 یا 6 لیٹر پر set کر کے آپ کو چونا لگا دیں گے۔ میٹر پر اُتنی ہی قیمت اور مقدار نظر آئے گی لیکن درپردہ ماپ تول میں کمی کی گئی ہوگی۔اسی طرح 1000، 1500، 2000 روپے کی الگ الگ setting کی ہوتی ہے۔ یہ حقیقت تجربہ کر نے سے درست پائی گئی ہے۔غیر مُصدّقہ اطلاع کے مطابق لاہور شہر میں ماسوائے ایک یا دو پیٹرول پمپس کے تقریباً تمام اِسی طرح کی ہیرا پھیری کر رہے ہیں۔ آپکے لیے مشورہ ہے کہ جب بھی پیٹرول ڈلوائیں تو قیمت کی بجائے مقدار کے لحاظ سے پیٹرول ڈلوائیں اور وہ بھی common number میں نہیں۔ یعنی 5، 10، 15، 20 لیٹر میں نہیں بلکہ 7، 9، 13، 17، 23 وغیرہ وغیرہ جیسے un-common نمبر کا استعمال کریں۔ اس طرح آپ نقصان سے بچ جائیں گے۔

enter image description here

کھانے پینے کی اکثر اشیاءکی پیکنگ پر ان کی استعمال کی مدت لکھی ہوتی ہے۔لیکن کبھی آپ نے سوچا ہے کہ پانی تو کبھی خراب نہیں ہوتا۔ پھر منرل واٹر کی بوتلوں پر بھی اس پانی کے زائد المعیاد ہونے کی تاریخ کیوں درج کی جاتی ہے؟ سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ”یہ پانی پلاسٹک کی بوتلوں میں پیک ہونے اور اپنے اردگرد موجود اشیاءکی وجہ سے اپنا معیار کھو بیٹھتا ہے۔ اگر پلاسٹک کی بوتلوں میں پیک اس پانی کو براہ راست دھوپ میں رکھ دیں تو اس میں Bisphenol-Aنامی کیمیکل پیدا ہو جاتا ہے۔ یہ کیمیکل انسانی جسم کے ہارمونز میں بگاڑ پیدا کرتا ہے جس سے خواتین میں چھاتی کا کینسر، مردوں میں بانجھ پن، دل اور دماغ کی بیماریاں پیدا ہو سکتی ہیں۔“ بھارتی اخبار انڈیا ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق سائنسدانوں کا کہنا تھا کہ ”پلاسٹک فطری طور پر مسام دار ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ پلاسٹک کی بوتلوں میں محفوظ کیا گیا پانی اپنے ماحول میں موجود گیسوں، بدبو، حتیٰ کہ بیکٹیریا کو بھی اپنے اندر جذب کر لیتا ہے۔“ سائنسدانوں کے مطابق بوتلوں میں محفوظ پانی 15سے 20دن میں استعمال کر لینا چاہیے۔ اس کے بعد بچ جانے والی بوتلیں ضائع کر دینی چاہییں۔ اگر آپ گھر میں منرل واٹر کی بوتلیں سٹور کرتے ہیں تو انہیں کم روشنی والی اور ٹھنڈی جگہ پر رکھیں اور سورج کی روشنی سے بچائیں۔ اس بات کا بھی دھیان رکھیں کہ بوتل باہر سے بھی صاف رہے اوراس پر گرد وغیرہ نہ جمنے پائے۔کیونکہ یہ گرد اور اس میں موجود جراثیم بوتل کے مساموں میں سے پانی میں جذب ہو سکتے ہیں۔